پاکستانی تاریخ میں پہلی مرتبہ عدم پیشی پر اٹارنی جنرل پر جرمانہ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

پاکستان کے چیف جسٹس نے اٹارنی جنرل اشتر اوصاف کو عدالت میں پیش نہ ہونے پر اُن پر 20 ہزار روپے جرمانہ عائد کردیا ہے اور کہا ہے کہ وہ یہ جرمانہ اپنی جیب سے ادا کریں گے۔

ملکی تاریخ میں ایسا پہلی بار ہوا ہے کہ عدالت میں پیش نہ ہونے پر اٹارنی جنرل کے عہدے پر تعینات کسی شخص کو جرمانہ کیا گیا ہے۔ اس سے پہلے متعدد وکلا کو عدم پیشی پر جرمانے کیے گئے ہیں۔

مزید پڑھیے

نااہلی کب تک، 62 ون ایف کی تشریح کے لیے عوامی نوٹس

’عدالتی کارروائی کا حصہ نہیں بننا چاہتے تو ان کی مرضی‘

چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے پانچ رکنی لارجر بینچ نے آئین کے آرٹیکل62 ون ایف کے تحت ارکان پارلیمان کی ہونے والی نااہلی کی مدت کے تعین سے متعلق درخواستوں کی سماعت کی۔

بی بی سی کے نامہ نگار شہزاد ملک کے مطابق ایڈیشنل اٹارنی جنرل وقار رانا نے عدالت میں اٹارنی جنرل کے تحریر کردہ دلائل پیش کیے جس پر بینچ کے سربراہ نے استفسار کیا کہ اٹارنی جنرل کہاں ہیں۔ وقار رانا نے عدالت کو بتایا کہ اٹارنی جنرل اس وقت لاہور میں ہیں اس لیے وہ عدالت میں پیش نہیں ہوسکتے۔

عدالت نے اس پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے اُنھیں دس ہزار روپے کا جرمانہ کردیا۔

ایڈیشنل اٹارنی جنرل کی طرف سے اپنے فیصلے میں نظرثانی کی درخواست پر چیف جسٹس نے اپنا یہ حکم واپس لیتے ہوئے اٹارنی جنرل کو شام چار بجے تک عدالت میں پیش ہوکر دلائل دینے کا حکم دیا۔

مقررہ وقت پر بھی اشتر اوصاف سپریم کورٹ کے بینچ کے سامنے پیش نہ ہوئے۔

ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایا کہ اشتر اوصاف لاہور میں مصروفیت کی وجہ سے عدالت میں پیش نہیں ہوسکتے۔ چیف جسٹس نے اس پر اٹارنی جنرل پر 20 ہزار روپے کا جرمانہ عائد کردیا اور کہا کہ وہ یہ جرمانہ اپنی جیب سے ادا کریں گے۔

بینچ کے سربراہ کا کہنا تھا کہ اگر اٹارنی جنرل آئندہ سماعت پر دلائل نہیں دیں گے تو پھر عدالت اپنے فیصلے میں لکھ دے گی کہ اٹارنی جنرل نے اس معاملے میں عدالت کی کوئی معاونت نہیں کی۔

عدالت پہلے ہی یہ واضح کرچکی ہے کہ اٹارنی جنرل کے دلائل کے بعد کسی اور کو نہیں سنا جائے گا۔ اطلاعات کے مطابق اٹارنی جنرل منگل کے روز بیرون ملک روانہ ہو رہے ہیں۔

سپریم کورٹ نے نااہل قرار دیے جانے والے وزیر اعظم میاں نواز شریف اور حزب مخالف کی جماعت پاکستان تحریک انصاف کے جہانگیر ترین کو بھی نوٹس جاری کر رکھا تھا تاہم نواز شریف نے ان درخواستوں میں فریق بننے سے معذوری ظاہر کی تھی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *