’رینجرز اہکاروں کی سزا معاف کرنا انصاف کے تقاضوں کے خلاف ہو گا‘

پاکستان کے ایوان بالا یعنی سینیٹ کی انسانی حقوق سے متعلق فنکشنل کمیٹی نے ایک متفقہ قرارداد منظور کی ہے جس میں صدر مملکت ممنون حسین سے کہا گیا ہے اگر صدر مملکت کراچی میں ایک نوجوان سرفراز شاہ کے قتل میں ملوث رینجرز اہلکاروں کی سزا معاف کرتے ہیں تو انصاف کے تقاضے پورے نہیں ہوں گے۔

سینیٹر نسرین جلیل کی صدارت میں ہونے والے اس اجلاس میں کہا گیا ہے کہ انصاف کے معاملے میں دہرا معیار نہیں ہونا چاہیے۔

مزید پڑھیئے

سرفراز شاہ قتل: رینجرز اہلکار کی سزائے موت معطل

اس کمیٹی کی سربراہ نسرین جلیل نے بی بی سی کو بتایا کہ اس متفقہ قرار داد میں کہا گیا ہے کہ اگر اہلکاروں کو معافی ملی تو انصاف کا نظام متنازع بن جائے گا۔

واضح رہے کہ کراچی میں رینجرز کے اہلکاروں نے ایک شخص سرفراز شاہ کو گولی مار کر ہلاک کر دیا تھا جبکہ اس واقعے کی ویڈیو مقامی میڈیا پر چلی تھی جس پر اس وقت کے چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے اس بارے میں از خود نوٹس بھی لیا تھا اور انسداد دہشت گردی کی متعقلہ عدالت کو جلد از جلد اس مقدمے کو نمٹانے کا حکم دیا تھا۔ عدالت نے رینجرز کے اہلکار شاہد ظفر کو قصوروار ٹھہراتے ہوئے اسے موت کی سزا سنائی تھی۔ سندھ ہائی کورٹ اور سپریم کورٹ نے اس فیصلے کو برقرار رکھا تھا۔

اجلاس کو بتایا گیا کہ معلوم ہوا ہے کہ رینجرز کے اہلکار کی سزا کو معاف کرنے کے بارے میں سمری صدر مملکت کے پاس پڑی ہے۔

اجلاس کے دوران حزب مخالف کی جماعت پاکستان پیپلز پارٹی کے سینیٹر فرحت اللہ بابر نے کہا کہ رینجرز کے اہلکار کے ہاتھوں نوجوان سرفراز کے قتل کے مناظر دل دھلا دینے والے تھے۔

اُنھوں نے کہا کہ اگر اہلکاروں کو معاف کیا گیا تو یہ افسوسناک ہو گا۔ فرحت اللہ بابر کا کہنا تھا کہ یہ معافی مقتول اور اس کے لواحقین کے انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہو گی۔

فرحت اللہ بابر نے کہا کہ یہ رواج خطرناک ہو گا کہ اگر وردی والا سولین کو مارے تو پیمانہ کوئی اور ہو جبکہ سویلین کے لیے پیمیانہ کوئی اور۔

اُنھوں نے کہا کہ صدر مملکت کا عہدہ معتبر ہے، وہ جاتے جاتے ایسا اقدام نہ کریں۔ انسانی حقوق کے بارے میں وزیر مملکت نے کمیٹی کو بتایا کہ رینجرز اہلکاروں کی معافی کی درخواست کا علم نہیں ہے۔

اُنھوں نے کہا کہ وزارت کے ریکارڈ کے مطابق صدر مملکت سزائیں معاف نہیں کر رہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *